religionobserver

احمدی ہم جنس پرستوں کے لیے سوشل میڈیا امید کی ایک کرن

 

ثمرہ حبیب: جس شرمندگی کا سامان مجھے کرنا پڑا اس نے میرے عقیدے کے ساتھ میرے رشتے پر گہرا اثر ڈالا

 

جون 2005 میں، احمدیہ قیادت کینیڈین وزیر اعظم پال مارٹن سے متعدد ملاقاتوں میں ہم جنس شادی کی اجازت دینے کے حکومتی اقدام کے خلاف اپنے تحفظات کا اظہار کر رہی تھی۔ یہ کہنا واضح نہیں ہے کہ آیا قیادت اپنی ’تبلیغاتی ذمہ داری‘ کو پورا کرنے کے لیے یہ کام کر رہی تھی یا یہ  اس کے ذریعے اپنی گھٹن کا شکار کمیونٹی کے ہم جنس پرست اراکین کی سامنے آنے کی خواہشات کی حوصلہ شکنی کرنا مقصود تھا۔

پچھلے سال جماعت احمدیہ کی کچھ خواتین کو جماعت کے روحانی ہیڈکوارٹر ربوہ میں لڑکیوں کے درمیان ہم جنس پرستانہ تعلقات کے واقعات کی بات کرنے پر شدید تنقید کا سامنا کرنا پڑا۔ چند سال پہلے، بہت سے احمدی پاکستان کے سابق وزیر اعظم ذوالفقار علی بھٹو کے امریکہ میں مقیم ہم جنس پرست پوتے کے ناچتے ہوئے ویڈیو کلپس شیئر کر تے ہوئے خوشی منا رہے تھے اور اس کو بھٹوخاندان  کے لیے عذاب الٰہی اور باعث شرمندگی قرار دے رہے تھے۔اس کی وجہ یہ بتا رہے تھے کہ بھٹو نے  1974 میں پاکستان میں احمدیوں کو غیر مسلم قرار دیا تھا۔ مگر اس  حقیقت کو پس پشت ڈال رہے تھے کہ دیگر کمیونٹیوں کی طرح احمدیہ کمیونٹی میں بھی ہم جن کے افرادموجود ہیں اور اس پر شرمندہ ہونے کی ضرورت نہیں ہے یہ ایک فطری عمل ہے۔

اگرچہ ٹورنٹو میں مقیم اور لاہور سے تعلق رکھنے والی احمدی جماعت سے تعلق رکھنے والی ثمرہ حبیب نے 2013 میں گارڈین میں ایک خبر لکھ کر اپنی ہم جنس پرست کی  شناخت کو عام کیا تھا لیکن جماعت کے ارکان کی اکثریت اس حقیقت کی نفی کرتی ہی نظر آئی کہ احمدیہ کمونٹی میں بھی LGBTQ افراد موجود ہیں۔ ثمرہ نے وضاحت کی تھی کہ اس کمیونٹی کا حصہ ہونے کے ناطے انہیں خود کو مسلمان کہلانے کا کوئی حق نہیں تھا کیونکہ وہ عجیب و غریب تھیں اور حجاب نہیں پہنتی تھیں۔

مزید احمدی LGBTQ افراد کو اپنی غیر بائنری شناخت ظاہر کرنے کے لیے  پلیٹ فارم فراہم کرنے کے میں سوشل میڈیا بھرپور کردار ادا کر رہا ہے۔ پاکستان سے باہر رہنے والے احمدیہ LGBTQs کے کچھ معاملات میں، سوشل میڈیا ان کی باہر آنے میں مدد کر رہا ہے۔ ان کو اپنی حالت زار کے اشتراک کر نے، ایک دوسرے کو مفید مشورے فراہم کرنے میں مدد کر رہا ہے کہ وہ ہم جنس پرست اور احمدیہ کمیونٹی کا حصہ ہونے کی وجہ سے پیش آنے والی مشکلات سے کیسے نمٹیں۔”Questioning Islam Ahmadia”ایک واضح گروپ ہے جسے Reddit پر کچھ احمدیوں /سابق احمدیوں نے احمدیہ کمیونٹی کے اندر تعمیری تنقید، مذہبیت، ایجنسی اور سماجی مسائل پر بحث کرنے کے لیئے  شروع کیا ہے۔ باعزت اور شائستہ بات چیت اس گروپ کے مقاصد میں شامل ہے جو 2018 میں قائم کیا گیا تھا اور اس کے تقریباً 2000 ارکان ہیں۔ ”قادیانی“ جیسی توہین آمیز الفاظ استعمال کرنے کی کسی کو اجازت نہیں۔جماعت احمدیہ پرسنسنی خیز اور بے جا تنقید پر مبنی مواد کو جلد از جلد ہٹا دیا جاتا ہے۔

اس Subreddit پر ایک پوسٹ تین ہفتے قبل ایک احمدی ہم جنس پرست کی جانب سے اس عنوان کے ساتھ بنائی گئی تھی: ”احمدی ہم جنس پرست گھر چھوڑنا چاہتی ہیں، خاندان مجھے اور خود کو قتل کرنے کی دھمکیاں دے رہا ہے”۔ اس پوسٹ سے حوصلہ پا کر، کچھ اورہم جنس پرسست احمدیوں نے اپنی ہڈ بیتی بیان کی۔ اس پوسٹ اور اس پر ہونے والے تبصروں نے جماعت احمدیہ کے اندر LGBTQ افراد کے ساتھ ہونے والے سلوک کی تشویشناک تصویر پیش کی۔

پوسٹ میں کہا گیا ہے، ”میں ایک احمدی ہم جنس پرست عورت ہوں اور میں جوان ہوں۔ میں اپنی حفاظت کی خاطر زیادہ تفصیلات میں نہیں جاؤں گی۔“ میری ایک گرل فرینڈ ہے، میں نے کبھی اپنی ہم جنس پرست ہونے کی شناخت ظاہر کرنے کے بارے میں نہیں سوچا کیونکہ میں اپنے والدین سے بہت ڈرتی تھی اور اس لیے بھی کہ میرا خاندان مذہبی ہے۔ انہوں نے کہا کہ میرے والد سمیت میرے خاندان کے کچھ لوگ جماعت میں بہت ہی باوقار عہدوں پر فائز ہیں، انہوں نے مزید کہا کہ مجھے اپنے والد کے جماعت کے دفتر میں رہنے سے کوئی مسئلہ نہیں تھا جب تک کہ میں نے اپنی ان کی خواہش پر ایک احمدی لڑکے سے شادی سے انکار نہیں کیا۔ میرے اس انکار پرانہوں نے مجھے پاکستان واپس بھیجنے کی دھمکی دی۔ مصنف نے کہا، وہ گھر سے باہر چلی گئی لیکن پھر گھار والوں کی منت سماجت پر واپس چلی گئی۔ انہوں نے کہا کہ جماعت کو ان کے ہم جنس پرست ہونے پر شبہ ہے۔ لیکن سب کچھ ٹھیک چل رہا تھا جب تک کہ اس کے والد کو اس کے نوکری کرنے کا پتا نہیں چلا تھا۔ اس کے والد نے اسے بتایا کہ اسے کام کرنے کی اجازت نہیں ہے کیونکہ جماعت جہاں شراب پیش کی جاتی ہے  اپنے لوگوں کو کام کرنے کی اجازت نہیں دیتی۔

 اس نے کہا کہ جب میں خود کو احمدی نہیں سمجھتی تو وہ مجھ پر جماعت کی تعلیمات کیسے مسلط کر سکتے ہیں۔ اس نے کہا کہ میرے والدین نے مجھے بار بار کہا کہ اگر آپ احمدی لڑکے سے شادی نہیں کریں گی تو جماعت پورے خاندان کو خارج کر دے گی۔ اس نے اپنے والد کے حوالے سے کہا کہ اگر میں نے کبھی کسی غیر احمدی سے شادی کی تو وہ مجھے اور خود کو مار ڈالے گا۔ ”میں دباؤ میں محسوس کر رہی ہوں، مجھے نہیں معلوم کہ کیا کروں، میں نہیں چاہتی کہ میرے والد مجھے مار دیں۔ میں باہر جانا چاہتی ہوں اور جماعت چھوڑنا چاہتی ہوں، براہ کرم مجھے مشورہ دیں کہ کیا کروں، اس نے گروپ ممبران سے پوچھا۔ جب اس رپورٹر نے ان کے ملک کے بارے میں پوچھا گیا تو اس نے کوئی جواب نہیں دیا۔

اس پوسٹ پر تبصرہ کرنے والے گروپ کے ایک رکن نے اپنے تجربے کا اظہار کیا۔ انہوں نے کہا: ”میں بھی ایک سابق احمدی ہم جنس پرست ہوں، اور میرے والدین کبھی بھی قبول نہیں کریں گے اس لیے میں بہت دور چلا گیا اور اگرچہ یہ تکلیف دہ ہے، یہ سب سے بہتر کام ہے جو میں اپنے لیے کر سکتا تھا۔” والدین بہت سی دھمکیوں کا استعمال کرتے ہیں جیسے کہ وہ خود کو مار ڈالیں گے یا پاکستان چلے جائیں گے، لیکن زیادہ تر معاملات میں یہ صرف دھمکیاں ہیں۔ یہ بالکل وہی ہے جو جماعت بھی کرتی ہے، انہوں نے کہا۔

انہوں نے Reddit پوسٹ کی مصنفہ کو مشورہ دیا کہ وہ اپنی گرل فرینڈ کے ساتھ اپنے والدین کا گھر چھوڑ دے لیکن وقتی طور پر جماعت کو نہ چھوڑیں کیونکہ ایک ساتھ تمام محاذ کھول لینا آسان نہیں ہوگا۔ براہ کرم باہر نکلیں۔ مجھے افسوس ہے کہ جب میرے تمام دوست مجھے ایسا کرنے کو کہتے رہے تو میں نے خوف زدہ ہو کر اپنے آپ کو کتنی غیر محفوظ اور کتنی تکلیف سے گزارا۔

ایک اور تبصرہ نگار نے کہا کہ یہ بہت مشکل ہے۔ ”میں نے گھر چھوڑ دیا تھا جب میں بہت چھوٹی تھی اور یہ میرے لیے بھی بہت نازک وقت تھا ”۔

گروپ کے ایک اور رکن نے اسے مشورہ دیا کہ وہ احمدیہ کمیونٹی کے عالمی سربراہ کو ہر اس چیز کے بارے میں ایک خط لکھیں جس سے آپ گزر رہی ہیں۔ وہ ایسا آدمی نہیں ہے جویک طرفہ سوچے، وہ صرف ایک فرقے کی نہیں بلکہ انسانیت کی بھلائی چاہتے ہیں۔اس پر پوسٹ کی مصنفہ نے جواب دیا کہ کمیونٹی کے سربراہ ہم جنس پرست ہونے کی وجہ سے میرا ساتھ نہیں دیں گے۔ اس نے کہا کہ جب ہم جنس پرست یا LGBTQ لوگ مدد لینے گئے تواس کا نتیجہ ماضی میں کچھ اچھا نہیں نکلا۔

LGBTQ کمیونٹی کے ایک اور احمدی رکن نے تبصرہ کیا، ”میں بھی ہم جنس پرست ہوں، میرے خاندان کو معلوم ہے اور میرے والدین نے میری پچھلی گرل فرینڈز سے ملاقات کی ہے اور یہ جان کر ان کو خوشی ہوئی کہ وہ مجھ سے کتنا پیار کرتی ہیں۔  میں بہت شکر گزار ہوں کہ میرے خاندان نے اس لحاظ سے مدد کی ہے۔ میں بہت سے جوڑوں کے بارے میں جانتا ہوں جنہیں دوسرے ممالک میں جانا پڑا ہے اور یہاں تک کہ ایسے جوڑے جن کے بچے ہیں اور ان کے اہل خانہ ابھی تک نہیں جانتے ہیں۔ تبصرہ میں مزید کہا گیا کہ وہ خود اپنی دنیا میں رہ کر خوش ہیں۔ اس رپورٹر سے بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ ”میں مشرق وسطیٰ کے ایک ملک میں رہتا ہوں جہاں میں اپنی زندگی گزارتا ہوں اور مذہبی مداخلت نہیں کرتا۔ میں اپنی مرضی کے مطابق اپنے عقیدے پر عمل کرنے کے لیے آزاد ہوں۔”

گروپ کے ایک اور رکن نے جماعت کی رکنیت سے استعفیٰ دینے کا سوال کیا۔ اس نے کہا کہ وہ جماعت چھوڑنا چاہتی ہیں مگر ابھی تک اس خوف کی وجہ سے نہیں چھوڑا کہ جماعت کے اندر میرے والدین کا سرعام نام لیا جائے گا اور جماعت چھوڑنے پر شرمندگی دلائی جائے گی۔ گروپ کے منتظم نے جواب دیا جماعت جان بوجھ کر کسی کے جماعت سے باہر جانے کا پرچار کرتی ہے تا کہ ان کا احساس شرمندگی ان کو جماعت کے ساتھ جڑے رکھنے پر مجبور کیئے رکھے۔

آرگنائزر نے پوسٹ کے مصنف کو مشورہ دیا کہ اگر وہ شمالی امریکہ میں ہیں تو ٹورنٹو، شکاگو، ڈی سی، ہیوسٹن وغیرہ سمیت بیشتر بڑے شہروں میں سابق مسلم میٹ اپ (سماجی، سپورٹ) گروپس موجود ہیں۔ منتظم نے کہا کہ میں فی الحال ٹورنٹو گروپ کی قیادت کی ٹیم میں ہوں اور اگر آپ مزید تفصیلات کے لیے مجھ سے رابطہ کرنا چاہتی ہیں تو میں آپ کو ایک گروپ سے ملوا سکتا ہوں۔

جماعت احمدیہ 200 سے زیادہ ممالک میں اپنے ارکان کے ساتھ ایک کراس کلچر مذہبی کمیونٹی کے طور پر ابھری ہے۔ یہ اپنے روایتی، سماجی اور مذہبی اصولوں کو سمجھتے ہوئے اس کراس کلچر کے دو اطراف کے درمیان جکڑے ہوئے ہیں۔ مذہبی آزادی کی مغربی اقدار اور بہتر معاشی مواقع انہیں بہت عزیز ہیں لیکن ساتھ ہی وہ اپنی سماجی اور مذہبی اقدار کی قیمت پر مغربی ثقافت میں پوری طرح ضم ہونا نہیں چاہتے۔

ہم جنس پرستی بنیادی طور پر کوئی مغربی رجحان نہیں ہے۔ مغرب صرف LGBTQ کو تحفظ فراہم کرتا ہے کہ وہ تحفظ کی ضمانت کے ساتھ اپنی علیحدہ جنسی شناخت کے ساتھ رہیں۔ لیکن ہجرت کرنے والی قدامت پسند برادریوں کے ارکان جو ہم جنس پرست، ہم جنس پرست یا ٹرانس جینڈر کے طور پر شناخت  ضاہر کرتے ہیں ان کے لیے خاندان اور ان کی مذہبی برادری کے رویے ایک بہت بڑا مسئلہ ہیں۔ یہ مسئلہ خاص طور پر احمدی LGBTQ لوگوں کے لیے اپنے عروج پر پہنچ جاتا ہے جب وہ  اپنی الگ جنسی شناخت ظاہر کرتے ہیں۔ ٹورنٹو میں مقیم احمدیہ کمیونٹی کے ایک رکن نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ ان کے لیے یہ خاص طور پر مشکل فیصلہ ہو سکتا ہے۔ اس صورت حال سے ڈرتے ہوئے، چند مزید احمدیہ LGBTQ خوش نصیبوں کو مخالف جنس کا ہم جنس پرست ساتھی مل جاتا ہے اور وہ بظاہر شادی میں داخل ہو جاتے ہیں جبکہ کچھ جرات کا مظاہرہ کرتے ہوئے اپنی شناخت ظاہر کر کے اپنی زندگی جینے کا فیصلہ کرتے ہیں۔

باہر آنے والے LGBTQ افراد کے بارے میں بات کرتے ہوئے، انہوں نے کہا کہ ان کے خاندان مختلف انداز میں اثر انداز ہوتے ہیں۔ زیادہ تر معاملات میں، سامنے آنے کے نتیجے میں فرد کو ان کے خاندان اور پوری برادری سے بے دخل کر دیا جاتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایک کم سخت ردعمل ایک ”علاج” تلاش کرنا ہے – یا تو مذہب کے ذریعے یا، بہتر خاندانوں میں مہنگے لیکن بیکار نفسیاتی علاج کے ذریعے۔ اس معاملے پر جماعت انتظامیہ کا باضابطہ ورژن حاصل کرنے کے لیے برطانیہ میں واقع میڈیا آفس کو ایک ای میل لکھا لیکن  کوئی جواب موصول نہیں ہوا۔

کچھ احمدی/سابق احمدی کارکن مختلف مغربی ممالک میں جماعت کے اندر ہومو فوبیا اور ٹرانس فوبیا سے نمٹنے کے لیے کام کر رہے ہیں اور نوجوانوں کو بااختیار بنا رہے ہیں کہ وہ اپنی سرحد پار کمیونٹی میں مرکزی دھارے میں موجود صنفی بائنریوں کی مخالفت کریں۔ چند انفرادی احمدیہ LGBTQ کا سامنے آنا چھوٹی پیش رفت ہے، لیکن چند سال پہلے ایسے واقع کے متعلق سوچا بھی نہیں جا سکتا تھا۔ ان بہادر افراد نے ایک کام کیا ہے جس سے یہ دعویٰ کرنا مشکل ہو گیا ہے کہ LGBT احمدیوں کا کوئی وجود نہیں ہے۔ انہوں نے ایک حد تک مرئیت قائم کی ہے جو کہ محدود ہونے کے باوجود اہم ہے کیونکہ مرئیت حقوق کے حصول کی طرف پہلا قدم ہے اور اس کے بغیر ایسا کرنے کی کوئی امید نہیں ہے۔

Share

Leave a Reply

Your email address will not be published.